The Maqam e Ibrahīm (Station of Ibrahim)

Maqam e Ibrahīm (Station of Ibrahim) is a small square stone associated with Hazrat Ibrahim, Hazrat Ismail and their building of the Kaaba. The imprint on the stone came from Hazrat Ibrahim’s feet. The imprints of Hazrat Ibrahim’s feet appeared when Hazrat Ibrahim stood on the stone while building the Kaaba; when the walls became too high, Hazrat Ibrahim stood on the maqam, which miraculously rose up to let him continue building and also miraculously went down in order to allow Ismail to hand him
stones.

High definition photo of Maqam e Ibrahim in 2021
According to Al-Arabiya News, the General Presidency for the Affairs of the Two Holy Mosques captured the details of the Station of Ibrahim with a new technique that uses stacked panoramic focus.

History and importance of Muqam-e-Ibrahim

History and importance The Maqam e Ibrahīm (Station of Ibrahim) relates back to the construction of the Holy Kaaba during the times of the Prophet Ibrahim (AS). Hazrat Ibrahim (AS) constructed the Kaabah using rocks from five mountains: Hira, Thubayr, Labnaan, Toor and Jabalul Khayr. Toor Seenaa is actually situated in the eastern desert of Egypt.

Significance of the Maqam-e-Ibrahim

At the time of Hazrat Ibrahim (AS), the Maqam was attached to the Kaaba. 2nd Caliph of Islam Hazrat Umar Farooq (RA) moved it to the place where it is currently present because it used to get too crowded for tawaf or prayers. It should be noted that the significance of the Maqam-e-Ibrahim lies in the fact that it is a place for performing Salah. After completion of seven circuits (Tawaf) of Kaabah and Istilam, a pilgrim should move towards Maqam-e-Ibrahim to offer two raka’t salah for tawaf. It is recommended to recite Surat-ul-Kafirun after Al-Fatihah in the first Rak’at
and Suratul Ikhlas in the second. But it is also permissible to recite any other Surahs instead. After offering Salah, make supplications to Allah (SWT).

The stone of Maqam e Ibrahim

The stone inside the casing is square shaped and measures 40 cm (16 in) in length and width, and 20 cm (7.9 in) in height. It used to be enclosed by a structure called the Maqsurat Ibrahim which was covered by a sitara: an ornamental, embroidered curtain that was replaced annually. It is placed inside a golden-metal enclosure. The outer casing has changed a number of times over the years.

Maqam e Ibrahim in Qur’an

Maqam e Ibrahīm (Station of Ibrahim) mentioned twice is the Quran, Maqam Ibrahim first appears in the Surah al-Baqarah verse 125 (وَاتَّخِذُوا مِن مَّقَامِ إِبْرَاهِیمَ مُصَلًّی). And then in Surah al-‘Imran ( فِیهِ آیاتٌ بَینَاتٌ مَّقَامُ إِبْرَاهِیمَ وَ مَنْ دَخَلَهُ کانَ آمِناً ).

Indeed, the first House [of worship] established for mankind was that at Bakkah (Original name of Makkah) – blessed and a guidance for the worlds. In it are clear signs [such as] the standing place of Abraham. And whoever enters it shall be safe. And [due] to Allah from the people is a pilgrimage to the House – for whoever is able to find thereto a way. But whoever disbelieves – then indeed, Allah is free from need of the worlds.
Qur’an.Surah A’le Imran 3:96-97

And [mention] when We made the House a place of return for the people and [a place of] security. And take, [O believers], from the standing place of Abraham a place of prayer. And We charged Abraham and Ishmael, [saying], “Purify My House for those who perform Tawaf and those who are staying [there] for worship and those who bow and prostrate [in prayer].”
Qur’an.Surah Baqrah 2:125 [2]

The Photo of Maqam e Ibrahim taken by Infinix mobile in 2018
Maqam e Ibrahim – April 2018

Hajj & Maqam e Ibrahim

Each year nearly several million Muslims make the pilgrimage, making it the largest temporary gathering on the globe. It is an act of recollection and worship, but also a symbolic act representing the spirit’s return to its homeland-one of the central elements of the Muslim life. Hajj is an imperative duty (fardh) for all Muslims physically and financially able to perform it.
The Maqam Ibrahim is also spelled Muqam, literally meaning “Station” or “Place”.

The Maqam e Ibrahim in Makkah
Another photo from web – Maqam e Ibrahim

مقام ابراہیم کی وجہ تسمیہ

مقام ابراہیم وہ پتھر ہے جو خانہ کعبہ کی تعمیر کے وقت خلیل اللہ حضرت ابراہیم علیہ السلام نے خانہ کعبہ کی بلند دیوار تعمیر کرنے کے لیے استعمال کیا تھا تاکہ وہ اس پتھر پر کھڑے ہوکر دیوار تعمیر کرسکیں ۔

مقام ابراہیم کی اصل پوزییشن

مقام ابراہم پہلے خانہ کعبہ سے بالکل قریب 7 فٹ کی دوری پر تھا ۔ جب مسلمانوں کی تعداد بڑھی اور طواف کرنے والے زیادہ ہو گئے تو اس مقام پر نماز پڑھنے والوں سے طواف کرنے والوں کو تکلیف ہونے لگی ۔ طواف کرنے والوں کی آسانی کے لیے دوسرے خلیفہ راشد سیدنا عمر فاروق رضی اللہ تعالی عنہ نے مقام ابراہیم کو ہٹا کر خانہ کعبہ سے 46 فٹ کی دوری پر کردیا ۔

سن 1967 سے پہلے اس مقام پر ایک کمرہ تھا مگر اب سونے کی اییک جالی میں بند ہے ۔ اس مقام کو مصلے کا درجہ حاصل ہے اور امام کعبہ اسی کی طرف سے قبلہ رخ ہو کر نماز پڑھاتے ہیں ۔ اس پتھر کو حجر اسمعیل بھی کہا جاتا ہے ۔ مقام ابراہیم زمین سے تھوڑا اونچا لکڑی کے گنبد پر مشتمل ہے ۔
مقام ابراہیم زمین سے تھوڑا اونچا لکڑی کے گنبد پر مشتمل ہے۔ یہ گنبد چار ستونوں پرکھڑا ہے۔ اس گنبد کے اندر وہ پتھر موجود ہے جس میں پائوں کے نشانات ہیں۔ ان چاروں ستونوں کے ساتھ چار آہنی دریچے بنائے گئے ہیں۔ جس سمت سے مقام ابراہیم میں داخل ہونے کا راستہ ہے اس میں سنہری اور منقش نشانات ہیں۔ وہیں چار ستونوں کے درمیان مصلیٰ ساباط ہے۔ دو ستونوں پر گنبد ہے۔ ان کے اطراف میں گنبد کے اندر سونے کے پانی سے آیات اور مقدس عبارات منقش ہیں۔مقام ابراہیم والا پتھر ،حرم شریف میں شیشے کے کیس میں رکھا ہوا ہے۔ قدموں کے نشانوں کی اصل ہیئت بد ل گئی ہے۔وجہ یہ ہے کہ یہ پتھر کھلا ہوا تھا کثرت سے زائرین کا ہاتھ لگنے سے اس کے نقوش ماند پڑگئے ہیں۔ایسا لگتا ہے کہ حضرت ابراہیم علیہ السلام اس پتھر پر جوتوں کے بغیر ننگے پیر کھڑے ہوتے ہونگے اس لئے کہ جوتوں کے بجائے پیروں کے نشان پڑے ہوئے ہیں۔

مقام ابراہیم کی پیمائش

اس مربع نما پتھر کی اونچائی 20 سنٹی میٹر اور طول عرض تقریبا 4 سنٹی میٹر اور اس کا رنگ سفید مائل بہ سرخ اور پیلا ہے۔ اس پتھر پر 10 سنٹی میٹر گہرا پاؤں ک نشان پایا جاتا ہے جس میں انگلیاں واضح دکھائی نہیں دیتیں۔ پرانے زمانی سے لوگوں کا اس پتھر سے متبرک ہونے کیلئے ہاتھ لگانے کی وجہ سے اس کا بالائی حصہ قدرے بڑا ہوا ہے۔ اب بھی اس پتھر پر موجود پاؤں کا نشان 27 سنٹی میٹر لمبا، 14 سنٹی میٹر چوڑا اور گہرائی 22 سنٹی میٹر ہے۔ دو پاؤں کے درمیان ایک سنٹی میٹر کا باریک فاصلہ موجود ہے

مقام ابراہیم پر نماز کی فضیلت

مسجد حرام میں مقام ابراہیم پر نماز پڑھنا افضل ہے ۔ مگر یہ مقام اب طواف کرنے والوں کے راستے کے بالکل درمیان ہے ۔ اس لیے اگر اس مقام پر کوئی نماز کے لیے کھڑا ہوجائے تو طواف کرنے والوں کو سخت تکلیف ہوتی ہے ۔ مسلمانوں کو تکلیف دینا حرام ہے ۔ اس لیے افضل کام کرنے کی جستجو میں حرام کام کرنے سے بچیں ۔

ساری نصیحتوں کو نظر انداز کر کے اگر آپ مقام ابراہییم پر نماز پڑھنے کے لیے بضد ہیں تو یہ بات یاد رکھیں کہ اب یہ اس مقام پر نہیں ہے جس مقام کا قرآن مییں ذکر ہے ۔ وہ مقام تو خانہ کعبہ کے بالکل نزدیک تھا اور دوسری بات یہ یاد رکھیں کہ امیر المومنین سییدنا حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ نے جس کام کو رکاوٹ سمجھا اور اس مبارک پتھر کو اس کی مبارک جگہ سے ہٹا دیا ۔ آج آپ خود ہی رکاوٹ بننے کے لیے بضد ہیں ۔ اس لیے طواف کرنے والوں کا خیال رکھیں اور اتنا پیچھے ہٹ کر نماز پڑھیں کہ آپ سے کسی کو کوئی پریشانی نہ ہو ۔

Latest high definition photo of Maqam e Ibrahim
Never-seen-before detailed images of the Maqam Ibrahim in Grand Mosque, Saudi Arabia. For the first time in history, Saudi officials captured high-definition images of the Maqam Ibrahim located in the Grand Mosque in Makkah.  


 

More Articles about Antichrist Dajjal
Antichrist Dajjal Eye and Huliya (Countenance)

 

Travel & Tourism