Dajjal tree Gharqad Boxthorn

Dajjal tree Gharqad Boxthorn

Dajjal tree Gharqad Boxthorn is a tree which will shelter the soldiers of the Antichrist Dajjal. The Gharqad tree is called Baxthorn in English. Its scientific name is Lycium shawii. It is the tree of the Jews and it is the only tree that will give them shelter.

Abu Huraira reported Allah’s Messenger (may peace be upon him) as saying: The last hour would not come unless the Muslims will fight against the Jews and the Muslims would kill them until the Jews would hide themselves behind a stone or a tree and a stone or a tree would say: Muslim, or the servant of Allah, there is a Jew behind me; come and kill him; but the tree Gharqad would not say, for it is the tree of the Jews.

الله کے آخری نبی محمّد ﷺ کا فرمان ہے:
حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ ، حَدَّثَنَا يَعْقُوبُ يَعْنِي ابْنَ عَبْدِ الرَّحْمَنِ ، عَنْ سُهَيْلٍ ، عَنْ أَبِيهِ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، أَنّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، قَالَ : ” لَا تَقُومُ السَّاعَةُ حَتَّى يُقَاتِلَ الْمُسْلِمُونَ الْيَهُودَ ، فَيَقْتُلُهُمُ الْمُسْلِمُونَ حَتَّى يَخْتَبِئَ الْيَهُودِيُّ مِنْ وَرَاءِ الْحَجَرِ وَالشَّجَرِ ، فَيَقُولُ الْحَجَرُ أَوِ الشَّجَرُ : يَا مُسْلِمُ يَا عَبْدَ اللَّهِ هَذَا يَهُودِيٌّ خَلْفِي فَتَعَالَ فَاقْتُلْهُ ، إِلَّا الْغَرْقَدَ فَإِنَّهُ مِنْ شَجَرِ الْيَهُودِ ” .
[صحيح مسلم » كِتَاب الْفِتَنِ وَأَشْرَاطِ السَّاعَةِ » بَاب ” لَا تَقُومُ السَّاعَةُ حَتَّى يَمُرَّ الرَّجُلُ … رقم الحديث: 5207]

"<yoastmark

In Palestine, the Jews are cultivating a lot of Gharqad tree on the occupied lands because they have full faith in the news narrated by the Holy Prophet (sws) as stated in the above hadith.

There are many names for the tree of Gharqad

Jewish tree
Dumb tree
The shield of Jewish Tree
Bargad

Gharqad is the name of a wild tree that grows in the form of a thorny bush. Which was found in the deserts around Medina.

All over the world, Israel (Jews) have made every effort to save from Muslims and Islam by force of arms.

According to the Hadith, the Jews have started a tree planting campaign all over the world for their own protection, in which everyone is increasingly participating. And they stand side by side in their tree-planting campaign in the name of protection from global warming.

Jewish scholars and researchers have been studying the Qur’an and Hadiths, paving the way for their progress and capturing the weaknesses of Muslims. That is why the Jews, after reciting the Hadith, have made Gharqad their guardian of the tree and consider its cultivation a blessing for themselves. The Jews know that every word that comes out of the blessed tongue of Hazrat Muhammad Mustafa (PBUH) is true and will be fulfilled at all costs. Therefore, in the light of this Hadith, the Jews are engaged in the cultivation of Dajjal tree Gharqad Boxthorn, so that during the war with the Muslims, when everything on this earth will shout and say: O Muslims, there is a Jew hidden behind me. Kill him, and then this tree will become dumb and become a refuge for this hidden Jew. The Jews know this will happen. This battle will continue.

More non-Muslims than Muslims, especially Jews, have read and pondered the teachings of Islam and acted more on the prophecies that are against them (Jews). On the contrary, they have begun to act on them. One of the campaigns is to plant their Ghargad tree for which meetings are held all over the world and its benefits are explained. Jews are so afraid of Muslims that this is probably why the Israeli government has been planting trees in Ghargad for decades. One purpose behind this tree planting campaign is to protect them and the other is to occupy as much space or land of Palestine as they can. There is also a massive siege outside the Jaffa Gate of Occupied Jerusalem, where Jesus will kill the Antichrist.

The Jews are busy with their work, but the most surprising thing is that this tree planting and cultivation is going on in large numbers in Muslim-majority countries. These include Indonesia, Malaysia, Pakistan and Afghanistan, where these trees are spreading rapidly.

Palestinian scholars say that the Jews have brought the time of the Prophet’s prophecy closer, especially in Israel by massive drowning. Since the defeat in Khyber, they have had neither a country nor an army. But in the 5th century, they gained a country for the first time, while the end of the Antichrist Dajjal is also to take place in Jerusalem and possibly from the Jews. So we should follow the apostle, oppose the Jews and not help them in any tangible or unwilling way. Avoid it.

In any case, in addition to being equipped with Islamic teachings, we should be aware of the current situation

flowers of Gharqad the tree of the Jews
flowers of Gharqad the tree of the Jews

Dajjal tree Gharqad Boxthorn

حضرت ابوہریرہ ؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا قیامت قائم نہ ہوگی یہاں تک کہ مسلمان یہودیوں سے جنگ کریں اور مسلمان انہیں قتل کردیں یہاں تک کہ یہودی پتھر یا درخت کے پیچھے چھپیں گے تو پتھر یا درخت کہے گا اے مسلمان اے عبداللہ یہ یہودی میرے پیچھے ہے آؤ اور اسے قتل کردو سوائے درخت غرقد کے کیونکہ وہ یہود کے درختوں میں سے ہے۔
[صحیح مسلم:جلد سوم:حدیث نمبر 2838 / 14635حدیث مرفوع مکررات 7 متفق علیہ 6

غرقد نامی درخت جو دجال کے سپاہیوں کو پناہ دے گا ۔ غرقد کے درخت کو انگریزی میں باکس تھورن کہتے ہیں ۔ اس کا سائنسی نام لیزیم شاوے ہے یہ یہودیوں کا درخت ہے اور یہ واحد درخت ہے جو ان کو پناہ دے گا۔

فلسطین میں یہودی مقبوضہ اراضی پر غرقد کی بہت زیادہ کاشت کررہے ہیں کیونکہ انھیں رسول اکرم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی بتائی ہوئی خبر پر کامل یقین ہے جیسا کہ مذکورہ بالا حدیث میں بیان فرمایا گیا ہے ۔

شجر غرقد کے کئی نام ہیں

شجر یہود
گونگا درخت
یہود کا پاسباں درخت
برگد

غرقد ایک جنگلی درخت کا نام ہے جو خاردار جھاڑی کی صورت میں ہوتا ہے، مدینہ کا قبرستان جنت البقیع کا اصل نام بقیع الغرقد اسی لیے ہے کہ جس جگہ یہ قبرستان ہے پہلے وہ غرقد کی جھاڑیوں کا خطہ تھا۔ جو مدینہ کے اطراف، صحراوں میں پایا جاتا تھا۔

پوری دنیا میں اسرائیل(یہودیوں) نے اپنی طاقت کے زور پر مسلمانوں سے اور اسلام سے بچنے کی ہر ممکنہ کوشش شروع کردی ہے ۔

حدیث کے مطابق یہودیوں نے اپنی حفاظت کی خاطردرخت لگانے کی مہم یا شجرکاری پوری دنیا میں شرو ع کررکھی ہے جس میں ہر کوئی بڑھ چڑھ کر حصہ لے رہا ہے۔ اور گلوبل وارمنگ سے حفاظت کے نام پر ان کی شجرکاری مہم میں شانہ بشانہ کھڑا ہے۔

یہودیوں کے اسکالرز اور محقق قرآن و احادیث کا مطالعہ کرکے اپنی ترقی کی راہیں کھولتے اور مسلمانوں کی کمزوریوں پر گرفت کرتے آرہے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ یہودیوں نے حدیث مبارکہ پڑھنے کے بعد غرقد کو اپنا پاسبان شجر قرار دے رکھا ہے اور اسکی کاشت کو اپنے لئے نعمت سمجھتے ہیں۔ یہودی جانتے ہیں کہ آقائے دوجہاں حضرت محمد مصطفے صلی اللہ علیہ وسلم کی زبان مبارک سے نکلنے والا ھر لفظ سچا ہے اور ہر قیمت پر پورا ھونے والا ہے۔ چنانچہ یہودی اس حدیث کی روشنی میں غرقد کی کاشت میں لگے ہوئے ہیں تاکہ مسلمانوں سے جنگ کے دوران جب اس زمین کی ہر چیز پکار پکار کر کہے گی کہ اے مسلمانوں میرے پیچھے ایک یہودی چھپا ہوا ہے۔ اسے قتل کر دو تو اس وقت یہی درخت گونگا بن کر اس چھپے ھوئے یہودی کی پناہ گاہ بن جائے گا۔ یہودی جانتے ہیں ایسا ہی ہوگا۔ یہ معرکہ ہوکر رہے گا۔

مسلمانو ں سے زیادہ غیر مسلموں خصوصاً یہودیوں نے اسلام کی تعلیمات کو پڑھا ہے غور وفکر کیا ہے اور ان پیشن گوئیوں پر زیادہ عمل کیا ہے جو ان کے (یہودیوں) کے خلاف ہیں۔اس کے برعکس انہوں نے اس پر عمل بھی شروع کردیا ہے۔ جس میں سے ایک مہم ان کی غرقد درخت لگانے کی ہے جس کی کاشت کے لیے پوری دنیا میں اجلاس منعقد کیے جاتے ہیں اس کے فوائد بتائے جاتے ہیں۔ یہودیوں کو مسلمانوں سے اتنا ڈر ہے کہ شاید یہی وجہ ہے کہ اسرائیلی حکومت گزشتہ کئی دہائیوں سے غرقد کی شجرکاری میں مصروف ہے۔ اس شجرکاری مہم کے پیچھے ایک مقصد تو یہ ہے کہ وہ اپنی حفاظت کرسکیں اور دوسرے یہ کہ جتنی زیادہ جگہوں پر غرقد لگیں گے اتنی جگہ یا زمین وہ اپنے قبضہ میں کرسکیں گے۔ مقبوضہ بیت المقدس کے جافا دروازے کے باہر بھی غرقد بڑے پیمانے پر لگایا گیا ہے جہاں حضرت عیسی علیہ السلام دجال کو قتل کریں گے

یہودی اپنے کاموں میں تو مصروف ہیں ہی لیکن سب سے حیران کن بات یہ ہے کہ یہ درختوں کی شجرکاری،اور کاشت ایسے ممالک میں بڑے پیمانے پر جاری ہیں جہاں مسلمانوں کی تعداد اکثریت میں ہے۔ جن میں انڈونیشیا، ملائیشیا، پاکستان، افغانستان شامل ہیں جہاں ان درختوں کا پھیلاؤ تیزی سے جاری ہے۔

فلسطینی علما ئے کرام کا کہنا ہے کہ بالخصوص اسرائیل میں بڑے پیمانے پر غرقد لگاکر یہودیوں نے نبی کریم ﷺ کی پیش گوئی کا وقت قریب کردیا ہے خیبر میں شکست کھانے کے بعد سے اب تک ان کے پاس نہ کوئی ملک تھا او رنہ ہی فوج، لیکن۲۰ویں صدی میں انہوں نے پہلی مرتبہ ایک ملک حاصل کیا جبکہ دجال کا خاتمہ بھی بیت المقدس میں ہونا ہے او رممکنہ طور پر وہ یہود سے ہوگا۔ تو ہمیں چاہئے کہ ہم رسول کی پیروی کریں یہودیوں کی مخالفت کریں اور ان کی کسی بھی غیر محسوس اورنہ چاہتے ہوئے بھی سے مدد نہ کریں۔اس سے پرہیز کریں۔

بہر کیف اس کے علاوہ ہمیں چاہئے کہ ہم اسلامی تعلیمات سے آراستہ ہونے کے ساتھ ساتھ حالات حاضرہ سے بھی واقف رہیں

See more articles on Dajjal Antichrist

False Miracles of Antichrist Dajjal
Antichrist’s hypersonic ride – Dajjal ki Sawari
Antichrist Dajjal Eye and Huliya (Countenance)
Antichrist Dajjal meaning in Urdu
Antichrist Dajjal is Coming Very Soon 

 

Botany of Lycium shawii (Dajjal tree Gharqad Boxthorn)

Erect to spreading, much-branched shrub, sometimes scandent, up to 2.5(–3) m tall, very spiny with axillary spines 5–10(–15) mm long; stems slightly zigzag, robust, glabrous, branches curving, greyish white. Leaves in fascicles of 2–6, simple and entire; stipules absent; petiole 2–5 mm long; blade obovate to lanceolate, 2–3.5 cm × c. 1 cm, base cuneate, apex acute to rounded, glabrous or with short glandular hairs, glossy. Flowers bisexual, regular, 5-merous; pedicel 6–15 mm long, pendulous; calyx tubular, 3–5 mm long, lobes triangular, c. 5 mm long, erect; corolla narrowly tubular, 12–16 mm long, lobes ovate-oblong, 3–4 mm long, creamy white to pale mauve with purple venation; stamens unequal, inserted above the middle of the corolla tube, filaments 3–9 mm long, 3 included, 2 slightly exserted; nectary red; ovary superior, globose, 1.5–2 mm long, style 10–12 mm long, stigma obtuse, 2-lobed. Fruit a globose or slightly obovoid berry 3–5 mm in diameter, red, many-seeded. Seeds ovate in outline, 2 mm × 1.5 mm, flattened, brown.
Lycium comprises about 90 species and is found mainly in warm temperate areas, the largest number of species occurring in the New World and about 35 in mainland Africa. Lycium shawii has long been regarded as a form of Lycium europaeum L., but in recent flora treatments for tropical Africa, all specimens collected south of Sudan are placed in Lycium shawii. The 2 species can mainly be distinguished by the calyx, which is cup-shaped, c. 2 mm long and with unequal teeth in Lycium europaeum and tubular, 3–5 mm long and with equal teeth in Lycium shawii.
Several other Lycium spp. are medicinally used in southern Africa and Madagascar. In Namibia the roots of young shrubs of Lycium oxycarpum Dunal are used against backache, diseases of the male genitals, painful and excessive menstruation, diarrhoea in children and as a purgative. In Botswana the smoke of the burnt roots of Lycium cinereum Thunb. is used as an analgesic for painful eyes. A decoction of the roots is taken to treat kidney pain. Reports on the properties of the fruit are contradictory, poisonous as well as edible. In Namibia the branches are used to make impenetrable barriers around gardens and kraals. Dried, powdered plant parts have a pleasant smell and are used as a perfume. Lycium mascarenense A.M.Venter & A.J.Scott from southern Mozambique, coastal South Africa and Madagascar is medicinally used in Madagascar. The aerial parts are commonly used in a medicine to treat Parkinson’s disease. The fruits are considered poisonous; birds that eat them die. (PROTA4U)

 

Dajjal